ایک دن بھی تو نہ اپنی رات نورانی ہوئی

جلیل مانک پوری

ایک دن بھی تو نہ اپنی رات نورانی ہوئی

جلیل مانک پوری

MORE BYجلیل مانک پوری

    ایک دن بھی تو نہ اپنی رات نورانی ہوئی

    ہم کو کیا اے مہ جبیں گر چاند پیشانی ہوئی

    سرد مہری کا تری ساقی نتیجہ یہ ہوا

    آگ کے مولوں جو بکتی تھی وہ مے پانی ہوئی

    اللہ اللہ پھوٹ نکلا رنگ چاہت کا مری

    زہر کھایا میں نے پوشاک آپ کی دھانی ہوئی

    ہم کو ہو سکتا نہیں دھوکا ہجوم حشر میں

    تیری صورت ہے ازل سے جانی پہچانی ہوئی

    لے اڑی گھونگٹ کے اندر سے نگاہ مست ہوش

    آج ساقی نے پلائی مے ہمیں چھانی ہوئی

    جان کر دشمن جو لپٹے جان میں جاں آ گئی

    بارک اللہ کس مزے کی تم سے نادانی ہوئی

    رفتہ رفتہ دیدۂ تر کو ڈبویا اشک نے

    پانی رستے رستے کشتی میری طوفانی ہوئی

    کر گئی دیوانگی ہم کو بری ہر جرم سے

    چاک دامانی سے اپنی پاک دامانی ہوئی

    خون کی چادر مبارک با حیا تلوار کو

    میان سے باہر نکل کر بھی نہ عریانی ہوئی

    رات کو چھپ کر نکل جاتی ہے آنکھوں سے جلیلؔ

    سیر دیکھو نیند بھی کمبخت سیلانی ہوئی

    مأخذ :
    • کتاب : Kainat-e-Jalil Manakpuri (Pg. 130)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY