ایک خواہش ہے بس زمانے کی

ابھیشیک کمار امبر

ایک خواہش ہے بس زمانے کی

ابھیشیک کمار امبر

MORE BY ابھیشیک کمار امبر

    ایک خواہش ہے بس زمانے کی

    تیری آنکھوں میں ڈوب جانے کی

    ساتھ جب تم نبھا نہیں پاتے

    کیا ضرورت تھی دل لگانے کی

    آج جب آس چھوڑ دی میں نے

    تم کو فرصت ملی ہے آنے کی

    تیری ہر چال میں سمجھتا ہوں

    تجھ کو عادت ہے دل دکھانے کی

    ہم تو خانہ بدوش ہیں لوگو

    ہم سے مت پوچھئے ٹھکانے کی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY