فاصلہ تو ہے مگر کوئی فاصلہ نہیں

شمیم کرہانی

فاصلہ تو ہے مگر کوئی فاصلہ نہیں

شمیم کرہانی

MORE BYشمیم کرہانی

    فاصلہ تو ہے مگر کوئی فاصلہ نہیں

    مجھ سے تم جدا سہی دل سے تم جدا نہیں

    کاروان آرزو اس طرف نہ رخ کرے

    ان کی رہ گزر ہے دل عام راستہ نہیں

    اک شکست آئینہ بن گئی ہے سانحہ

    ٹوٹ جائے دل اگر کوئی حادثہ نہیں

    آئیے چراغ دل آج ہی جلائیں ہم

    کیسی کل ہوا چلے کوئی جانتا نہیں

    آسماں کی فکر کیا آسماں خفا سہی

    آپ یہ بتائیے آپ تو خفا نہیں

    کس لیے شمیمؔ سے اتنی بدگمانیاں

    مل کے دیکھیے کبھی آدمی برا نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY