فلک نے رنج تیر آہ سے میرے زبس کھینچا

خاں آرزو سراج الدین علی

فلک نے رنج تیر آہ سے میرے زبس کھینچا

خاں آرزو سراج الدین علی

MORE BYخاں آرزو سراج الدین علی

    فلک نے رنج تیر آہ سے میرے زبس کھینچا

    لبوں تک دل سے شب نالے کو میں نے نیم رس کھینچا

    مرے شوخ خراباتی کی کیفیت نہ کچھ پوچھو

    بہار حسن کو دی آب اس نے جب چرس کھینچا

    رہا جوش بہار اس فصل گر یوں ہی تو بلبل نے

    چمن میں دست گلچیں سے عجب رنج اس برس کھینچا

    کہا یوں صاحب محمل نے سن کر سوز مجنوں کا

    تکلف کیا جو نالہ بے اثر مثل جرس کھینچا

    نزاکت رشتہ الفت کی دیکھو سانس دشمن کی

    خبردار آرزوؔ ٹک گرم کر تار نفس کھینچا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    فلک نے رنج تیر آہ سے میرے زبس کھینچا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY