فلک سے چاندنی پھر جھانکتی ہے

اشک الماس

فلک سے چاندنی پھر جھانکتی ہے

اشک الماس

MORE BY اشک الماس

    فلک سے چاندنی پھر جھانکتی ہے

    زمیں پر تیرگی جب ناچتی ہے

    ستارا جب بھی ٹوٹا آسماں سے

    وہی خواہش دوبارا جاگتی ہے

    بنا لیتی ہے زنجیروں سے پائل

    محبت رقص کرنا جانتی ہے

    پتہ ہے کہ وہاں پانی نہیں ہے

    مگر امید صحرا چھانتی ہے

    قضا پوری ہو کرنی پھر کسی کی

    زمیں محور پہ ایسے بھاگتی ہے

    میں راز زندگی کیونکر بتاؤں

    کہاں یہ نسل کہنا مانتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites