فن اصل میں پنہاں ہے دل زار کے اندر

اسرار اکبر آبادی

فن اصل میں پنہاں ہے دل زار کے اندر

اسرار اکبر آبادی

MORE BYاسرار اکبر آبادی

    فن اصل میں پنہاں ہے دل زار کے اندر

    فن کار ہے اک اور بھی فن کار کے اندر

    کانٹوں پہ بچھاتا ہے گلابوں کا بچھونا

    دو رنگ ہیں اک ساتھ مرے یار کے اندر

    وہ شور تھا محفل میں کوئی سن نہیں پایا

    اک چیخ تھی پازیب کی جھنکار کے اندر

    تم سچ کی زینت تھے مجھے دیکھتے کیسے

    میں بھی تھا نئی صبح کے اخبار کے اندر

    اسرارؔ مجھے دل نے یہ کل رات بتایا

    شعلہ ہوں بلندی کا میں اک خار کے اندر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے