فریب جلوہ کہاں تک بروئے کار رہے

اختر علی اختر

فریب جلوہ کہاں تک بروئے کار رہے

اختر علی اختر

MORE BYاختر علی اختر

    فریب جلوہ کہاں تک بروئے کار رہے

    نقاب اٹھاؤ کہ کچھ دن ذرا بہار رہے

    خراب شوق رہے وقف انتظار رہے

    اب اور کیا ترے وعدوں کا اعتبار رہے

    میں راز عشق کو رسوا کروں معاذ اللہ

    یہ بات اور ہے دل پر نہ اختیار رہے

    چمن میں رکھ تو رہا ہوں بنا نشیمن کی

    خدا کرے کہ زمانہ بھی سازگار رہے

    جنوں کا رخ ہے حریم حیات کی جانب

    الٰہی پردۂ اوہام اعتبار رہے

    مآخذ
    • کتاب : Jadeed Shora-e-Urdu (Pg. 516)
    • Author : Dr. Abdul Wahid
    • مطبع : Feroz sons Printers Publishers and Stationers

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY