فرط الم سے آہ کئے جا رہا ہوں میں

جگدیش سہائے سکسینہ

فرط الم سے آہ کئے جا رہا ہوں میں

جگدیش سہائے سکسینہ

MORE BYجگدیش سہائے سکسینہ

    فرط الم سے آہ کئے جا رہا ہوں میں

    اے عشق کیا گناہ کیے جا رہا ہوں میں

    مقبول ہوں گے دہر میں داغ جگر مرے

    ان کو چراغ راہ کیے جا رہا ہوں میں

    رنج و الم کا لطف اٹھانے کے واسطے

    راحت سے بھی نباہ کیے جا رہا ہوں میں

    گلزار کامرانی و دنیائے آرزو

    اعمال سے تباہ کیے جا رہا ہوں میں

    مجھ کو عطا ہوا تھا دل آئنہ جمال

    صد حیف اسے سیاہ کیے جا رہا ہوں میں

    غم کہہ رہا ہے کون ہے مجھے سے سوا عزیز

    سب کے دلوں میں راہ کیے جا رہا ہوں میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY