فصل گل بھی ترس کے کاٹی ہے

مضطر خیرآبادی

فصل گل بھی ترس کے کاٹی ہے

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    فصل گل بھی ترس کے کاٹی ہے

    عمر کانٹوں میں بس کے کاٹی ہے

    میں نے رو کر گزار دی اے ابر

    جیسے تو نے برس کے کاٹی ہے

    ہو کے پابند الفت صیاد

    زندگی بے‌ قفس کے کاٹی ہے

    سوز الفت میں زندگی میں نے

    غیر کا منہ جھلس کے کاٹی ہے

    زندگی بھر رہے حسینوں میں

    عمر پھولوں میں بس کے کاٹی ہے

    اس نے کس ناز سے مری گردن

    کمر شوق کس کے کاٹی ہے

    اس کی حسرت ہے دید کے قابل

    جس نے مضطرؔ ترس کے کاٹی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Khirman (Part-1) (Pg. 185)
    • Author : Muztar Khairabadi
    • مطبع : Javed Akhtar (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY