Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

فصل گل ہو کہ خزاں سب میں چٹکتے آئے

محمود راہی

فصل گل ہو کہ خزاں سب میں چٹکتے آئے

محمود راہی

MORE BYمحمود راہی

    فصل گل ہو کہ خزاں سب میں چٹکتے آئے

    ہم ہر اک دور کے دامن میں مہکتے آئے

    ٹوٹ جانا تو ستاروں کا مقدر ٹھہرا

    ہم چمک والے ہیں چمکیں گے چمکتے آئے

    جو روایت ہے ازل سے وہ ہے انجام اپنا

    اہل دل وقت کی سولی پہ لٹکتے آئے

    کتنے الزام تھے طعنے تھے شکایت تھی بہت

    سب اسی در پہ مگر سر کو پٹکتے آئے

    ہم جنوں والوں سے کب دور تھی منزل راہیؔ

    عقل والے تھے جو راہوں میں بھٹکتے آئے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے