فکر ہے شوق کمر عشق دہاں پیدا کروں

منشی امیر اللہ تسلیم

فکر ہے شوق کمر عشق دہاں پیدا کروں

منشی امیر اللہ تسلیم

MORE BYمنشی امیر اللہ تسلیم

    فکر ہے شوق کمر عشق دہاں پیدا کروں

    چاہتا ہوں ایک دل میں دو مکاں پیدا کروں

    طبع عالی سے اگر اوج بیاں پیدا کروں

    میں زمین شعر میں بھی آسماں پیدا کروں

    ہوں میں وہ دل سوختہ تاثیر آہ گرم سے

    گلشن جنت میں بھی دور خزاں پیدا کروں

    پاؤں کہتے ہیں ترے کوچے میں آ کر ضعف سے

    تو گرا دے اور میں خواب گراں پیدا کروں

    اب بھی تم آؤ تو میں آنکھوں میں بہر یک نظر

    ڈھونڈ کر تھوڑی سی جان ناتواں پیدا کروں

    میں ہوں اے تسلیمؔ شاگرد نسیمؔ دہلوی

    چاہیئے استاد کا طرز بیاں پیدا کروں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    فکر ہے شوق کمر عشق دہاں پیدا کروں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے