فکر میں مفت عمر کھونا ہے

شیخ ظہور الدین حاتم

فکر میں مفت عمر کھونا ہے

شیخ ظہور الدین حاتم

MORE BYشیخ ظہور الدین حاتم

    فکر میں مفت عمر کھونا ہے

    ہو چکا ہے جو کچھ کہ ہونا ہے

    کھیل سب چھوڑ کھیل اپنا کھیل

    آپ قدرت کا تو کھلونا ہے

    آنکھ ٹک کھول دید قدرت کر

    پھر تو پاؤں پسار سونا ہے

    چپ رہا کر بڑوں کی مجلس میں

    یہ بھی ایک عافیت کا کونا ہے

    میرا معشوق ہے مزوں میں بھرا

    کبھو میٹھا کبھو سلونا ہے

    چھل بل اس کی نگاہ کا مت پوچھ

    سحر ہے ٹوٹکا ہے ٹونا ہے

    رو تو حاتمؔ 'حسین' کے غم میں

    اور رونا تو رانڈ رونا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Diwan-e-Zadah (Pg. 289)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY