فراقؔ اک نئی صورت نکل تو سکتی ہے

فراق گورکھپوری

فراقؔ اک نئی صورت نکل تو سکتی ہے

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    فراقؔ اک نئی صورت نکل تو سکتی ہے

    بقول اس آنکھ کے دنیا بدل تو سکتی ہے

    ترے خیال کو کچھ چپ سی لگ گئی ورنہ

    کہانیوں سے شب غم بہل تو سکتی ہے

    عروس دہر چلے کھا کے ٹھوکریں لیکن

    قدم قدم پہ جوانی ابل تو سکتی ہے

    پلٹ پڑے نہ کہیں اس نگاہ کا جادو

    کہ ڈوب کر یہ چھری کچھ اچھل تو سکتی ہے

    بجھے ہوئے نہیں اتنے بجھے ہوئے دل بھی

    فسردگی میں طبیعت مچل تو سکتی ہے

    اگر تو چاہے تو غم والے شادماں ہو جائیں

    نگاہ یار یہ حسرت نکل تو سکتی ہے

    اب اتنی بند نہیں غم کدوں کی بھی راہیں

    ہوائے کوچۂ محبوب چل تو سکتی ہے

    کڑے ہیں کوس بہت منزل محبت کے

    ملے نہ چھاؤں مگر دھوپ ڈھل تو سکتی ہے

    حیات لو تہ‌ دامان مرگ دے اٹھی

    ہوا کی راہ میں یہ شمع جل تو سکتی ہے

    کچھ اور مصلحت‌ جذب عشق ہے ورنہ

    کسی سے چھٹ کے طبیعت سنبھل تو سکتی ہے

    ازل سے سوئی ہے تقدیر‌‌ عشق موت کی نیند

    اگر جگائیے کروٹ بدل تو سکتی ہے

    غم زمانہ و سوز نہاں کی آنچ تو دے

    اگر نہ ٹوٹے یہ زنجیر گل تو سکتی ہے

    شریک شرم و حیا کچھ ہے بد گمانی‌ٔ حسن

    نظر اٹھا یہ جھجک سی نکل تو سکتی ہے

    کبھی وہ مل نہ سکے گی میں یہ نہیں کہتا

    وہ آنکھ آنکھ میں پڑ کر بدل تو سکتی ہے

    بدلتا جائے غم روزگار کا مرکز

    یہ چال گردش ایام چل تو سکتی ہے

    وہ بے نیاز سہی دل متاع ہیچ سہی

    مگر کسی کی جوانی مچل تو سکتی ہے

    تری نگاہ سہارا نہ دے تو بات ہے اور

    کہ گرتے گرتے بھی دنیا سنبھل تو سکتی ہے

    یہ زور و شور سلامت تری جوانی بھی

    بقول عشق کے سانچے میں ڈھل تو سکتی ہے

    سنا ہے برف کے ٹکڑے ہیں دل حسینوں کے

    کچھ آنچ پا کے یہ چاندی پگھل تو سکتی ہے

    ہنسی ہنسی میں لہو تھوکتے ہیں دل والے

    یہ سر زمین مگر لعل اگل تو سکتی ہے

    جو تو نے ترک محبت کو اہل دل سے کہا

    ہزار نرم ہو یہ بات کھل تو سکتی ہے

    ارے وہ موت ہو یا زندگی محبت پر

    نہ کچھ سہی کف افسوس مل تو سکتی ہے

    ہیں جس کے بل پہ کھڑے سرکشوں کو وہ دھرتی

    اگر کچل نہیں سکتی نگل تو سکتی ہے

    ہوئی ہے گرم لہو پی کے عشق کی تلوار

    یوں ہی جلائے جا یہ شاخ پھل تو سکتی ہے

    گزر رہی ہے دبے پاؤں عشق کی دیوی

    سبک روی سے جہاں کو مسل تو سکتی ہے

    حیات سے نگہہ واپسیں ہے کچھ مانوس

    مرے خیال سے آنکھوں میں پل تو سکتی ہے

    نہ بھولنا یہ ہے تاخیر حسن کی تاخیر

    فراقؔ آئی ہوئی موت ٹل تو سکتی ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    فراقؔ اک نئی صورت نکل تو سکتی ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY