فطرت دل کی مہربانی ہے

کنول ایم۔اے

فطرت دل کی مہربانی ہے

کنول ایم۔اے

MORE BYکنول ایم۔اے

    فطرت دل کی مہربانی ہے

    میں ہوں یا غم کی ترجمانی ہے

    غم میں بھی دل کو شادمانی ہے

    ان کی شفقت ہے مہربانی ہے

    ہر خوشی جن پہ میں نے قرباں کی

    کیوں انہیں شوق جاں ستانی ہے

    جو بھی ہے داستان اہل وفا

    درد و آلام کی کہانی ہے

    ہم کہاں قابل غم دل تھے

    اک ستم گر کی مہربانی ہے

    دل کا رونا ہے اور کچھ بھی نہیں

    ہائے کیا چیز یہ جوانی ہے

    سوز غم درد رنج ہجر ملال

    دل پہ کس کس کی مہربانی ہے

    کس قدر ہے عجیب صورت حال

    غم ہے دل کو نہ شادمانی ہے

    خامشی میں ہے لطف گویائی

    یہ بھی اک شان بے زبانی ہے

    ایک موہوم سی تمنا کی

    دل کی دنیا پہ حکمرانی ہے

    مجھ سے ملتے ہو بے نیازانہ

    یہ بھی انداز دل ستانی ہے

    داغ دل کا کہیں نہ مٹ جائے

    یہ تمہاری ہی اک نشانی ہے

    اے محبت یہ کیا کیا تو نے

    بد گمانی ہی بد گمانی ہے

    زندگی بھر فریب کھائے ہیں

    دوستوں کی یہ مہربانی ہے

    ہم سر راہ لٹ گئے یکسر

    رہبروں کی یہ مہربانی ہے

    اے کنولؔ انتہائے شوق نہ پوچھ

    رات دن شغل نغمہ خوانی ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY