گدا دست اہل کرم دیکھتے ہیں

محمد رفیع سودا

گدا دست اہل کرم دیکھتے ہیں

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    گدا دست اہل کرم دیکھتے ہیں

    ہم اپنا ہی دم اور قدم دیکھتے ہیں

    نہ دیکھا جو کچھ جام میں جم نے اپنے

    سو یک قطرۂ مے میں ہم دیکھتے ہیں

    یہ رنجش میں ہم کو ہے بے اختیاری

    تجھے تیری کھا کر قسم دیکھتے ہیں

    غرض کفر سے کچھ نہ دیں سے ہے مطلب

    تماشائے دیر و حرم دیکھتے ہیں

    حباب لب جو ہیں اے باغباں ہم

    چمن کو ترے کوئی دم دیکھتے ہیں

    نوشتے کو میرے مٹاتے ہیں رو رو

    ملائک جو لوح و قلم دیکھتے ہیں

    مٹا جائے ہے حرف حرف آنسوؤں سے

    جو نامہ اسے کر رقم دیکھتے ہیں

    اکڑ سے نہیں کام سنبل کی ہم کو

    کسی زلف کا پیچ و خم دیکھتے ہیں

    خدا دشمنوں کو نہ وہ کچھ دکھائے

    جو کچھ دوست سے اپنے ہم دیکھتے ہیں

    ستم سے کیا تو نے ہم کو جو خوگر

    کرم سے ترے ہم ستم دیکھتے ہیں

    مگر تجھ سے رنجیدہ خاطر ہے سوداؔ

    اسے تیرے کوچے میں کم دیکھتے ہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    زمرد بانو

    زمرد بانو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY