گہری رات ہے اور طوفان کا شور بہت

زیب غوری

گہری رات ہے اور طوفان کا شور بہت

زیب غوری

MORE BYزیب غوری

    گہری رات ہے اور طوفان کا شور بہت

    گھر کے در و دیوار بھی ہیں کمزور بہت

    تیرے سامنے آتے ہوئے گھبراتا ہوں

    لب پہ ترا اقرار ہے دل میں چور بہت

    نقش کوئی باقی رہ جائے مشکل ہے

    آج لہو کی روانی میں ہے زور بہت

    دل کے کسی کونے میں پڑے ہوں گے اب بھی

    ایک کھلا آکاش پتنگیں ڈور بہت

    مجھ سے بچھڑ کر ہوگا سمندر بھی بے چین

    رات ڈھلے تو کرتا ہوگا شور بہت

    آ کے کبھی ویرانئ دل کا تماشا کر

    اس جنگل میں ناچ رہے ہیں مور بہت

    اپنے بسیرے پنچھی لوٹ نہ پایا زیبؔ

    شام گھٹا بھی اٹھی تھی گھنگھور بہت

    RECITATIONS

    زیب غوری

    زیب غوری

    زیب غوری

    زیب غوری

    زیب غوری

    گہری رات ہے اور طوفان کا شور بہت زیب غوری

    مأخذ :
    • کتاب : zartaab (Pg. 103)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY