گل کو شرمندہ کر اے شوخ گلستان میں آ

عبدالوہاب یکروؔ

گل کو شرمندہ کر اے شوخ گلستان میں آ

عبدالوہاب یکروؔ

MORE BYعبدالوہاب یکروؔ

    گل کو شرمندہ کر اے شوخ گلستان میں آ

    لب سیں غنچے کا جگر خوں کرو مسکیان میں آ

    وہی اک جلوہ نما جگ میں ہے دوجا کوئی نہیں

    دیکھ واجب کوں سدا مجمع امکان میں آ

    زندگی مجھ دل مردہ کی توہیں ہے مت جا

    دل سے گر خوش نہیں اے شوخ مری جان میں آ

    گل دل غنچہ نمن تنگ ہو رنگ و بو سیں

    جب کرے یاد ترے لب کے تئیں دھیان میں آ

    گر تو مشتاق ہے دلبر سفر دریا کا

    آ کے کر موج مرے دیدۂ گریان میں آ

    مت ملا کر تو رقیباں سیں سبھی پاجی ہیں

    دیکھ کر قدر آپس کا اے صنم شان میں آ

    یوں مرا دل ترے کوچے کا بلا گرداں ہے

    جیوں کبوتر اڑے ہے چھتری کے گردان میں آ

    گر کرو قتل مرے دل کوں تغافل سیں جان

    پھر کے دعویٰ نہ کروں حشر کے میدان میں آ

    دل یکروؔ ہے ترا پاے بندھیا کاکل کا

    یاد رکھ اس کوں سدا مت کبھو نسیان میں آ

    مأخذ :
    • کتاب : diwan-e-yakro (Pg. 6)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY