غم دیے ہیں تو مسرت کے گہر بھی دینا

شمس رمزی

غم دیے ہیں تو مسرت کے گہر بھی دینا

شمس رمزی

MORE BY شمس رمزی

    غم دیے ہیں تو مسرت کے گہر بھی دینا

    اے خدا تو مجھے جینے کا ہنر بھی دینا

    حاکم وقت یہ ہجرت مجھے منظور مگر

    دم رخصت مجھے سامان سفر بھی دینا

    اے شب و روز کے مالک مجھے اس دنیا میں

    لیلۃ القدر کی مانند سحر بھی دینا

    سن ذرا غور سے سن اے شجر سایہ فگن

    جب ترے سائے میں پہنچوں تو ثمر بھی دینا

    لفظ نکلیں جو زباں سے تو دلوں تک پہنچیں

    میری تقریر میں کچھ ایسا اثر بھی دینا

    تیرے الطاف و کرم کی ہے بہر سو شہرت

    مال و زر دے گا ہی تو لعل و گہر بھی دینا

    تو جو شمشیر بکف ہو تو میں سر پیش کروں

    جو ہیں دل والے انہیں آتا ہے سر بھی دینا

    بخشنے والے زمانے کو جمال ہر رنگ

    جو تجھے دیکھ سکے ایسی نظر بھی دینا

    لے چلا میں تری جنت سے بیاباں کی طرف

    سر چھپانے کو وہاں تو مجھے گھر بھی دینا

    حرف آ جائے نہ تجھ پر کہیں کم ظرفی کا

    دامن شمسؔ کو تو دیدۂ تر بھی دینا

    مآخذ:

    • Book : Gubar-e-shams (Pg. 86)
    • Author : Shams Ramzi
    • مطبع : Urdu Tahzeeb, Delhi (1997)
    • اشاعت : 1997

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY