غم دوراں غم جاناں کا نشاں ہے کہ جو تھا

سید عابد علی عابد

غم دوراں غم جاناں کا نشاں ہے کہ جو تھا

سید عابد علی عابد

MORE BYسید عابد علی عابد

    غم دوراں غم جاناں کا نشاں ہے کہ جو تھا

    وصف خوباں بہ حدیث دگراں ہے کہ جو تھا

    لذت عرض وفا راحت جاں ہے کہ جو تھی

    دل‌ تپاں اشک رواں شوق جواں ہے کہ جو تھا

    شرع و آئین کی تعزیر کے با وصف شباب

    لب و رخسار کی جانب نگراں ہے کہ جو تھا

    میرے پاؤں سے ہیں الجھے ہوئے ریشم کے سے تار

    ہمدمو یہ تو وہی بند گراں ہے کہ جو تھا

    عشق کی طرز تکلم وہی چپ ہے کہ جو تھی

    لب خوش گوئے ہوس محو بیاں ہے کہ جو تھا

    راہرو دشت میں فریاد کناں ہیں کہ جو تھا

    خندہ زن قافلہ راہ براں ہے کہ جو تھا

    مغبچے خوش ہیں کہ بزم ان کی ہے ساقی ان کا

    بر سر کار وہی پیر مغاں ہے کہ جو تھا

    جلوۂ یار سے کیا شکوۂ بے جا کیجے

    شوق دیدار کا عالم وہ کہاں ہے کہ جو تھا

    حلقۂ وعظ سے اب تک ہے گریزاں دنیا

    حلقۂ زلف مدار دو جہاں ہے کہ جو تھا

    میرے ہنسنے پہ خفا تھے مرے رونے پہ ہنسے

    وہی رنگ ستم عشوہ گراں ہے کہ جو تھا

    سنگ طفلاں سے ذرا بچ کے رہے قصر بلند

    یہ وہی کار گہ شیشہ گراں ہے کہ جو تھا

    دوستو ہم نفسو سنتے ہو عابدؔ کی غزل

    یہ وہی شعلہ نوا سوختہ جاں ہے کہ جو تھا

    مآخذ :
    • کتاب : Jadeed Shora-e-Urdu (Pg. 697)
    • Author : Dr. Abdul Wahid
    • مطبع : Feroz sons Printers Publishers and Stationers

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY