غم دل کا بیان چھوڑ گئے

مصحفی غلام ہمدانی

غم دل کا بیان چھوڑ گئے

مصحفی غلام ہمدانی

MORE BYمصحفی غلام ہمدانی

    غم دل کا بیان چھوڑ گئے

    ہم یہ اپنا نشان چھوڑ گئے

    تری دہشت سے باغ میں صیاد

    مرغ سب آشیان چھوڑ گئے

    راہ میں مجھ کو ہمرہاں میرے

    جان کو ناتوان چھوڑ گئے

    نفرت آئی سگ و ہما کو کیا

    جو مرے استخوان چھوڑ گئے

    چلتے چلتے بھی یہ جفا کیشاں

    ہاتھ مجھ پر ندان چھوڑ گئے

    کسی در پر انہوں کو جا نہ ملی

    جو ترا آستان چھوڑ گئے

    سفر اس دل سے کر گئے غم و درد

    یار سونا مکان چھوڑ گئے

    صفحۂ روزگار پر لکھ لکھ

    عشق کی داستان چھوڑ گئے

    لے گئے سب بدن زمیں میں ہم

    مصحفیؔ اک زبان چھوڑ گئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY