غم زمانہ نہیں اک عذاب ہے ساقی

اختر شیرانی

غم زمانہ نہیں اک عذاب ہے ساقی

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    غم زمانہ نہیں اک عذاب ہے ساقی

    شراب لا مری حالت خراب ہے ساقی

    شباب کے لیے توبہ عذاب ہے ساقی

    شراب لا مجھے پاس شباب ہے ساقی

    اٹھا پیالہ کہ گلشن پہ پھر برسنے لگی

    وہ مے کہ جس کا قدح ماہتاب ہے ساقی

    نکال پردۂ مینا سے دختر رز کو

    گھٹا میں کس لئے یہ ماہتاب ہے ساقی

    تو واعظوں کی نہ سن میکشوں کی خدمت کر

    گنہ ثواب کی خاطر ثواب ہے ساقی

    زمانے بھر کے غموں کو ہے دعوت غرا

    کہ ایک جام میں سب کا جواب ہے ساقی

    کلام جس کا ہے معراج حافظؔ و خیامؔ

    یہی وہ اخترؔ خانہ خراب ہے ساقی

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Akhtar Shirani (Pg. 241)
    • Author : Akhtar Shirani
    • مطبع : Modern Publishing House, Daryaganj New delhi (1997)
    • اشاعت : 1997

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY