غم کی تہذیب اذیت کا قرینہ سیکھیں

شاہد ماہلی

غم کی تہذیب اذیت کا قرینہ سیکھیں

شاہد ماہلی

MORE BYشاہد ماہلی

    غم کی تہذیب اذیت کا قرینہ سیکھیں

    آؤ اس شہر میں جینا ہے تو جینا سیکھیں

    موت آنے کی صدا لمحہ بہ لمحہ چاہیں

    زیست کرنے کا ہنر زینہ بہ زینہ سیکھیں

    ہر نہیں ہاں سے بڑی ہے یہ حقیقت سمجھیں

    ہاں بہت سیکھ چکے اب تو کوئی نا سیکھیں

    جھانک کر آنکھوں میں سینے میں اتر کر دیکھیں

    نقشۂ دل سے کوئی راز دفینہ سیکھیں

    شہر کوتاہ میں سب پست نشیں پست نشاں

    کس کو ہم راز کریں کس کا قرینہ سیکھیں

    فلسفہ عشق کا اسرار فن و حکمت کے

    خانقاہوں سے پڑھیں سینہ بہ سینہ سیکھیں

    دل تو آئینہ ہے شفاف رکھیں اے شاہدؔ

    کیوں کریں بغض و حسد کس لیے کینہ سیکھیں

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY