غمزہ پیکان ہوا جاتا ہے

بیدم شاہ وارثی

غمزہ پیکان ہوا جاتا ہے

بیدم شاہ وارثی

MORE BYبیدم شاہ وارثی

    غمزہ پیکان ہوا جاتا ہے

    دل کا ارمان ہوا جاتا ہے

    دیکھ کر الجھی ہوئی زلف ان کی

    دل پریشان ہوا جاتا ہے

    تیری وحشت کی بدولت اے دل

    گھر بیابان ہوا جاتا ہے

    ساز و ساماں کا نہ ہونا ہی مجھے

    ساز و سامان ہوا جاتا ہے

    مشکل آسان ہوئی جاتی ہے

    کیوں پریشان ہوا جاتا ہے

    دل سے جاتے ہیں مرے صبر و قرار

    گھر یہ ویران ہوا جاتا ہے

    دل کی رگ رگ میں سما کر بیدمؔ

    درد تو جان ہوا جاتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے