گر غیر کے گھر سے نہ دل آرام نکلتا

مومن خاں مومن

گر غیر کے گھر سے نہ دل آرام نکلتا

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    گر غیر کے گھر سے نہ دل آرام نکلتا

    دم کاہے کو یوں اے دل ناکام نکلتا

    میں وہم سے مرتا ہوں وہاں رعب سے اس کے

    قاصد کی زباں سے نہیں پیغام نکلتا

    کرتے جو مجھے یاد شب وصل عدو تم

    کیا صبح کہ خورشید نہ تا شام نکلتا

    جب جانتے تاثیر کہ دشمن بھی وہاں سے

    اپنی طرح اے گردش ایام نکلتا

    ہر ایک سے اس بزم میں شب پوچھتے تھے نام

    تھا لطف جو کوئی مرا ہم نام نکلتا

    کیوں کام طلب ہے مرے آزار سے گردوں

    ناکام سے دیکھا ہے کہیں کام نکلتا

    تھی نوحہ زنی دل کی جنازے پہ ضروری

    شاید کہ وہ گھبرا کے سر بام نکلتا

    کانٹا سا کھٹکتا ہے کلیجے میں غم ہجر

    یہ خار نہیں دل سے گل اندام نکلتا

    حوریں نہیں مومنؔ کے نصیبوں میں جو ہویں

    بت خانے ہی سے کیوں یہ بد انجام نکلتا

    مآخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY