گردش سیارگاں خوب ہے اپنی جگہ

ثروت حسین

گردش سیارگاں خوب ہے اپنی جگہ

ثروت حسین

MORE BYثروت حسین

    گردش سیارگاں خوب ہے اپنی جگہ

    اور یہ اپنا مکاں خوب ہے اپنی جگہ

    اے دل آشفتہ سر رات اندھیری ہے پر

    رقص ترا شمع ساں خوب ہے اپنی جگہ

    کاغذ آتش زدہ تیری حکایت ہی کیا

    پھر بھی تماشائے جاں خوب ہے اپنی جگہ

    ہجر نژادوں کا ہے ایک الگ ہی جہاں

    اس سے نہ ملنا یہاں خوب ہے اپنی جگہ

    سیر بیاباں و در عقدہ کشا نیز

    رنج مسافت میاں خوب ہے اپنی جگہ

    چہرۂ بلقیس پر آنکھ ٹھہرتی نہیں

    صبح یمن کا سماں خوب ہے اپنی جگہ

    مآخذ:

    • کتاب : meyaar (Pg. 302)
    • مطبع : anjuman taraqqi urdu

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY