غزلوں کی دھنک اوڑھ مرے شعلہ بدن تو

محسن نقوی

غزلوں کی دھنک اوڑھ مرے شعلہ بدن تو

محسن نقوی

MORE BYمحسن نقوی

    غزلوں کی دھنک اوڑھ مرے شعلہ بدن تو

    ہے میرا سخن تو مرا موضوع سخن تو

    کلیوں کی طرح پھوٹ سر شاخ تمنا

    خوشبو کی طرح پھیل چمن تا بہ چمن تو

    نازل ہو کبھی ذہن پہ آیات کی صورت

    آیات میں ڈھل جا کبھی جبریل دہن تو

    اب کیوں نہ سجاؤں میں تجھے دیدہ و دل میں

    لگتا ہے اندھیرے میں سویرے کی کرن تو

    پہلے نہ کوئی رمز سخن تھی نہ کنایہ

    اب نقطۂ تکمیل ہنر محور فن تو

    یہ کم تو نہیں تو مرا معیار نظر ہے

    اے دوست مرے واسطے کچھ اور نہ بن تو

    ممکن ہو تو رہنے دے مجھے ظلمت جاں میں

    ڈھونڈے گا کہاں چاندنی راتوں کا کفن تو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    غزلوں کی دھنک اوڑھ مرے شعلہ بدن تو نعمان شوق

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY