گھر سے باہر نکل کر

عزیز انصاری

گھر سے باہر نکل کر

عزیز انصاری

MORE BYعزیز انصاری

    گھر سے باہر نکل کر

    دنیا کو بھی دیکھا کر

    فصلیں کاٹ برائی کی

    اچھائی کو بویا کر

    نیکی ڈال کے دریا میں

    اپنے آپ سے دھوکا کر

    سب کو پڑھتا رہتا ہے

    اپنے آپ کو سمجھا کر

    بوڑھے برگد کے نیچے

    دل ٹوٹے تو بیٹھا کر

    محفل محفل ہنستا ہے

    تنہائی میں رویا کر

    دنیا پیچھے آئے گی

    دیکھ تو دنیا ٹھکرا کر

    پڑھ کے سب کچھ سیکھے گا

    دیکھ کے بھی کچھ سیکھا کر

    دشمن ہوں یا دوست عزیزؔ

    سب کو اپنا سمجھا کر

    مأخذ :
    • کتاب : Bole Meri Gazal (Pg. 28)
    • Author : Aziz Ansari
    • مطبع : Aziz Ansari, Station Director Akashvani Jalgaon (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY