گھر سے گھر تک کا راستہ نہ ملا

پریم کمار نظر

گھر سے گھر تک کا راستہ نہ ملا

پریم کمار نظر

MORE BYپریم کمار نظر

    گھر سے گھر تک کا راستہ نہ ملا

    کوئی بھی خود میں جھانکتا نہ ملا

    سب کے ہم راہ سب کے سائے تھے

    شہر میں کوئی دیوتا نہ ملا

    کتنے ہونٹوں کا لمس یاد رہے

    ایک بھی نقش دیر پا نہ ملا

    روشنی کے سفیر لوٹ گئے

    شہر در شہر رت جگا نہ ملا

    تنگ تھا ذات کا حصار بہت

    کوئی رستہ فرار کا نہ ملا

    کتنے آنسو نچوڑ کر دیکھے

    کھو گیا تھا جو قہقہہ نہ ملا

    ہم ہی تھے اپنے آس پاس نظرؔ

    راہ میں کوئی دوسرا نہ ملا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY