گھر سے نکلا تو ملاقات ہوئی پانی سے

ثروت حسین

گھر سے نکلا تو ملاقات ہوئی پانی سے

ثروت حسین

MORE BY ثروت حسین

    گھر سے نکلا تو ملاقات ہوئی پانی سے

    کہاں ملتی ہے خوشی اتنی فراوانی سے

    خوش لباسی ہے بڑی چیز مگر کیا کیجئے

    کام اس پل ہے ترے جسم کی عریانی سے

    سامنے اور ہی دیوار و شجر پاتا ہوں

    جاگ اٹھتا ہوں اگر خواب جہاں بانی سے

    عمر کا کوہ گراں اور شب و روز مرے

    یہ وہ پتھر ہے جو کٹتا نہیں آسانی سے

    شام تھی اور شفق پھوٹ رہی تھی ثروتؔ

    ایک رقاصہ کی جلتی ہوئی پیشانی سے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    گھر سے نکلا تو ملاقات ہوئی پانی سے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY