aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

جہاں کہ ہے جرم ایک نگاہ کرنا

آرزو لکھنوی

جہاں کہ ہے جرم ایک نگاہ کرنا

آرزو لکھنوی

MORE BYآرزو لکھنوی

    جہاں کہ ہے جرم ایک نگاہ کرنا

    وہیں ہے گنہ پہ ڈٹ کے گناہ کرنا

    بتوں سے بڑھا کے میل نباہ کرنا

    جہاں کے سفید کو ہے سیاہ کرنا

    سکھایا ہے مجھ کو اس مری بے کسی نے

    اسی کو ستم کا اس کے گواہ کرنا

    لبھانے سے دل کے تھا تو یہ مدعا تھا

    غریب کی زندگی کو تباہ کرنا

    یہی تو ہے ہاں یہی وہ ادائے معصوم

    الگ ہوئی جو سکھا کے گناہ کرنا

    جفا سے بھی لیں مزہ نہ وفا کا کیوں کر

    ہمیں تو ہر اک طرح ہے نباہ کرنا

    یہ کہتا ہے چشم ہوش ربا کا جادو

    تجھے ترے ہاتھ سے ہے تباہ کرنا

    تری نظر سے سیکھا ہے آہ دل نے

    جگر میں شگاف ڈال کے راہ کرنا

    نظر میں نظر گڑائے ہے یوں وہ ظالم

    کہ آرزوؔ اب کٹھن ہے اک آہ کرنا

    مأخذ:

    Nishaan-e-Aarzu (Pg. ebook--32 page-24)

    • مصنف: انور حسین آرزو
      • اشاعت: 1968
      • سن اشاعت: 1968

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے