گھٹن عذاب بدن کی نہ میری جان میں لا

اکبر حیدرآبادی

گھٹن عذاب بدن کی نہ میری جان میں لا

اکبر حیدرآبادی

MORE BY اکبر حیدرآبادی

    گھٹن عذاب بدن کی نہ میری جان میں لا

    بدل کے گھر مرا مجھ کو مرے مکان میں لا

    مری اکائی کو اظہار کا وسیلہ دے

    مری نظر کو مرے دل کو امتحان میں لا

    سخی ہے وہ تو سخاوت کی لاج رکھ لے گا

    سوال عرض طلب کا نہ درمیان میں لا

    دل وجود کو جو چیر کر گزر جائے

    اک ایسا تیر تو اپنی کڑی کمان میں لا

    ہے وہ تو حد گرفت خیال سے بھی پرے

    یہ سوچ کر ہی خیال اس کا اپنے دھیان میں لا

    بدن تمام اسی کی صدا سے گونج اٹھے

    تلاطم ایسا کوئی آج میری جان میں لا

    چراغ راہ گزر لاکھ تابناک سہی

    جلا کے اپنا دیا روشنی مکان میں لا

    بہ رنگ خواب سہی ساری کائنات اکبرؔ

    وجود کل کو نہ اندیشۂ گمان میں لا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    گھٹن عذاب بدن کی نہ میری جان میں لا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY