گرا تو گر کے سر خاک ابتذال آیا

افضال احمد سید

گرا تو گر کے سر خاک ابتذال آیا

افضال احمد سید

MORE BYافضال احمد سید

    گرا تو گر کے سر خاک ابتذال آیا

    میں تیغ تیز تھا لیکن مجھے زوال آیا

    عجب ہوا کہ ستارہ شناس سے مل کر

    شکست انجم نوخیز کا خیال آیا

    میں خاک سرد پہ سویا تو میرے پہلو میں

    پھر ایک خواب شکست آئنہ مثال آیا

    کمان شاخ سے گل کس ہدف کو جاتے ہیں

    نشیب خاک میں جا کر مجھے خیال آیا

    کوئی نہیں تھا مگر ساحل تمنا پر

    ہوائے شام میں جب رنگ اندمال آیا

    یہی ہے وصل دل کم معاملہ کے لیے

    کہ آئنے میں وہ خورشید خد و خال آیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY