گوشے بدل بدل کے ہر اک رات کاٹ دی

طاہر فراز

گوشے بدل بدل کے ہر اک رات کاٹ دی

طاہر فراز

MORE BYطاہر فراز

    گوشے بدل بدل کے ہر اک رات کاٹ دی

    کچے مکاں میں اب کے بھی برسات کاٹ دی

    وہ سر بھی کاٹ دیتا تو ہوتا نہ کچھ ملال

    افسوس یہ ہے اس نے مری بات کاٹ دی

    دل بھی لہولہان ہے آنکھیں بھی ہیں اداس

    شاید انا نے شہ رگ جذبات کاٹ دی

    جب بھی ہمیں چراغ میسر نہ آ سکا

    سورج کے ذکر سے شب‌ ظلمات کاٹ دی

    جادوگری کا کھیل ادھورا ہی رہ گیا

    درویش نے شبیۂ طلسمات کاٹ دی

    حالانکہ ہم ملے تھے بڑی مدتوں کے بعد

    اوقات کی کمی نے ملاقات کاٹ دی

    ٹھنڈی ہوائیں مہکی فضا نرم چاندنی

    شب تو بس ایک تھی جو ترے سات کاٹ دی

    مأخذ :
    • کتاب : Kashkol (Pg. 122)
    • Author : Tahir Faraz
    • مطبع : Isteara Publications (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY