گل کی خونیں جگری یاد آئی

سید عابد علی عابد

گل کی خونیں جگری یاد آئی

سید عابد علی عابد

MORE BYسید عابد علی عابد

    گل کی خونیں جگری یاد آئی

    پھر نسیم سحری یاد آئی

    آج فرمان رہائی پہنچا

    آج بے بال و پری یاد آئی

    دشمن آباد رہیں جن کے طفیل

    اپنی عالی گہری یاد آئی

    جب کسی نے مری آنکھیں سی دیں

    تب مجھے دیدہ وری یاد آئی

    ساز جب ٹوٹ گئے ہم نفسو

    اب تمہیں نغمہ گری یاد آئی

    کبھی روشن جو ہوئی شمع بہار

    باغ کی بے بصری یاد آئی

    کم نہ تھے گردش دوراں کے گلے

    کیوں تری کم نظری یاد آئی

    پہلے معلوم نہ تھا دل کا مقام

    اب تمہیں شیشہ‌ گری یاد آئی

    آج ارباب خرد کو عابدؔ

    میری شوریدہ سری یاد آئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY