گمان پڑتا یہی ہے کہ رہبری ہوئی ہے

صائمہ آفتاب

گمان پڑتا یہی ہے کہ رہبری ہوئی ہے

صائمہ آفتاب

MORE BYصائمہ آفتاب

    گمان پڑتا یہی ہے کہ رہبری ہوئی ہے

    یہ اپنی راہ کسی راہ سے جڑی ہوئی ہے

    ہزار ابر محبت یہاں برس بھی چکے

    بس ایک شاخ تمنا نہیں ہری ہوئی ہے

    ملی تھی ہم کو خدا سے بہشت کے بدلے

    مگر یہ زندگی معیار سے گری ہوئی ہے

    افق پہ پھیلا ہوا ہے فراق یار کا رنگ

    اداس شام مری گود میں پڑی ہوئی ہے

    اٹھا لے ہاتھ مرے چارہ گر کہ اس دل میں

    صلیب حسرت غم مستقل گڑی ہوئی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY