غنچۂ دل کہ بکھرتا بھی دکھائی نہ دیا

محشر عنایتی

غنچۂ دل کہ بکھرتا بھی دکھائی نہ دیا

محشر عنایتی

MORE BYمحشر عنایتی

    غنچۂ دل کہ بکھرتا بھی دکھائی نہ دیا

    ایسا بکھرا کہ اشارا بھی دکھائی نہ دیا

    کس کے ہمراہ نظر آتا تھا تنہا تنہا

    کس سے بچھڑا ہوں کہ تنہا بھی دکھائی نہ دیا

    روشنی کی وہ چکا چوندھ تھی آنکھوں میں کہ ہم

    شہر سے نکلے تو صحرا بھی دکھائی نہ دیا

    سرد مہریٔ زمانہ کی سلگتی ہوئی آگ

    کیا بلا تھی کہ دھواں سا بھی دکھائی نہ دیا

    ان کتابوں پہ تو ہم نے بھی کیا ہے کچھ کام

    جن میں اک حرف تمنا بھی دکھائی نہ دیا

    بس چلے تھے کہ غبار رہ منزل اٹھا

    چہرے وہ بدلے کہ اپنا بھی دکھائی نہ دیا

    رات بھر خون کے دریا میں نہایا خورشید

    دامن صبح پہ دھبا بھی دکھائی نہ دیا

    سارا عالم تھا کہ تاریک نظر آتا تھا

    اور محشرؔ کو دھندلکا بھی دکھائی نہ دیا

    مآخذ:

    • کتاب : Sahbaa-o-Saman (Pg. 139)
    • اشاعت : 1st 1979 IInd 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY