گزر کو ہے بہت اوقات تھوڑی

امیر مینائی

گزر کو ہے بہت اوقات تھوڑی

امیر مینائی

MORE BY امیر مینائی

    گزر کو ہے بہت اوقات تھوڑی

    کہ ہے یہ طول قصہ رات تھوڑی

    جو مے زاہد نے مانگی مست بولے

    بہت یا قبلۂ حاجات تھوڑی

    کہاں غنچہ کہاں اس کا دہن تنگ

    بڑھائی شاعروں نے بات تھوڑی

    اٹھے کیا زانوے غم سے سر اپنا

    بہت گزری رہی ہیہات تھوڑی

    خیال ضبط گریہ ہے جو ہم کو

    بہت امسال ہے برسات تھوڑی

    پلائے لے کے نقد ہوش ساقی

    تہی دستوں کی ہے اوقات تھوڑی

    وہی ہے آسماں پر گنج انجم

    ملی تھی جو تری خیرات تھوڑی

    ترا اے دخت رز واصف ہے واعظ

    پئے حرمت ہے اتنی بات تھوڑی

    چلو منزل امیرؔ آنکھیں تو کھولو

    نہایت رہ گئی ہے رات تھوڑی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites