حادثہ تو بس اک بہانہ تھا

محمد علی ساحل

حادثہ تو بس اک بہانہ تھا

محمد علی ساحل

MORE BYمحمد علی ساحل

    حادثہ تو بس اک بہانہ تھا

    روح کو جسم چھوڑ جانا تھا

    بے اثر سب دوائیں ہوتی رہیں

    زخم کم بخت بھی پرانا تھا

    کیسے کہتا میں الوداع اس کو

    اس کے دل میں مرا ٹھکانہ تھا

    قطرہ قطرہ تھا غم سمندر میں

    سیپیوں میں اسے سجانا تھا

    مفلسی میں اکیلا چھوڑ آئے

    ساتھ جس کا تمہیں نبھانا تھا

    راہ پرخار تھی مگر مجھ کو

    اپنا دامن بھی خود بچانا تھا

    وہ نہ سمجھا اصول کی خوشبو

    اس کا انداز تاجرانہ تھا

    ہم مناتے رہے جسے ہر دم

    اس کی عادت میں روٹھ جانا تھا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    محمد علی ساحل

    محمد علی ساحل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے