حال دل اپنا لکھوں حال تمہارا لکھوں

محمد فیض اللہ فیض

حال دل اپنا لکھوں حال تمہارا لکھوں

محمد فیض اللہ فیض

MORE BYمحمد فیض اللہ فیض

    حال دل اپنا لکھوں حال تمہارا لکھوں

    تو ہی بتلا کہ ترے خط میں میں کیا کیا لکھوں

    ان کو اپنانے کی سب کوششیں ناکام ہوئیں

    بازیٔ عشق میں اب اپنے کو ہارا لکھوں

    جس میں تصویر نظر آتی تھی ہر وقت تری

    آئنہ ٹوٹ گیا اب وہ تمہارا لکھوں

    گر گریباں ہی سلامت ہے نہ دامن اس کا

    کیسی حالت میں ہے دیوانہ تمہارا لکھوں

    فیضؔ حالات ہیں جو کچھ بھی کرم ہے اس کا

    کیوں نہ ہر حال کو احسان تمہارا لکھوں

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY