حالت حال سے بیگانہ بنا رکھا ہے

عباس قمر

حالت حال سے بیگانہ بنا رکھا ہے

عباس قمر

MORE BYعباس قمر

    حالت حال سے بیگانہ بنا رکھا ہے

    خود کو ماضی کا نہاں خانہ بنا رکھا ہے

    خوف دوزخ نے ہی ایجاد کیا ہے سجدہ

    ڈر نے انسان کو دیوانہ بنا رکھا ہے

    منبر عشق سے تقریر کی خواہش ہے ہمیں

    دل کو اس واسطے مولانا بنا رکھا ہے

    ماتم شوق بپا کرتے ہیں ہر شام یہاں

    جسم کو ہم نے اذاں خانہ بنا رکھا ہے

    وقت رخصت ہے مرے چاہنے والوں نے بھی اب

    سانس کو وقت کا پیمانہ بنا رکھا ہے

    جانتے ہیں وہ پرندہ ہے نہیں ٹھہرے گا

    ہم نے اس دل کو مگر دانا بنا رکھا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY