ہاں جسے عاشقی نہیں آتی

جلیل مانک پوری

ہاں جسے عاشقی نہیں آتی

جلیل مانک پوری

MORE BYجلیل مانک پوری

    ہاں جسے عاشقی نہیں آتی

    لذت زندگی نہیں آتی

    جیسے اس کا کبھی یہ گھر ہی نہ تھا

    دل میں برسوں خوشی نہیں آتی

    جب سے بلبل اسیر دام ہوئی

    کسی گل کو ہنسی نہیں آتی

    سب شرابی مجھے کہیں تجھ کو

    شرم اے بے خودی نہیں آتی

    یوں تو آتی ہیں سیکڑوں باتیں

    وقت پر ایک بھی نہیں آتی

    سوچتا کیا ہے پی بھی لے زاہد

    کچھ قیامت ابھی نہیں آتی

    انتہا غم کی اس کو کہتے ہیں

    زخم کو بھی ہنسی نہیں آتی

    کوندتی ہے ہزار رنگ سے برق

    پھر بھی شوخی تری نہیں آتی

    صرف جب تک نہ خون دل ہو جلیلؔ

    رنگ پر شاعری نہیں آتی

    مآخذ:

    • کتاب : Kainat-e-Jalil Manakpuri (Pg. 261)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY