ہاں ساقیٔ مستانہ بھر دے مرا پیمانہ

آغا حشر کاشمیری

ہاں ساقیٔ مستانہ بھر دے مرا پیمانہ

آغا حشر کاشمیری

MORE BYآغا حشر کاشمیری

    ہاں ساقیٔ مستانہ بھر دے مرا پیمانہ

    گھنگھور گھٹا ہے یا اڑتا ہوا مے خانہ

    ہوتی ہیں شب غم میں یوں دل سے مری باتیں

    جس طرح سے سمجھائے دیوانے کو دیوانہ

    کیا تم نے کہا دل سے کیا دل نے کہا ہم سے

    بیٹھو تو سنائیں ہم اک روز یہ افسانہ

    غصہ میں جو دی گالی منہ چوم لیا میں نے

    ظالم نے کہا یہ کیا میں نے کہا جرمانہ

    مطرب سے یہ کہتا تھا حشرؔ اپنی غزل سن کر

    ہے میری جوانی کا بھولا ہوا افسانہ

    مأخذ :
    • کتاب : غزل اس نے چھیڑی-5 (Pg. 39)
    • Author : فرحت احساس
    • مطبع : ریختہ بکس ،بی۔37،سیکٹر۔1،نوئیڈا،اترپردیش۔201301 (2018)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY