ہاتھ آ سکا ہے سلسلۂ جسم و جاں کہاں

سحر انصاری

ہاتھ آ سکا ہے سلسلۂ جسم و جاں کہاں

سحر انصاری

MORE BYسحر انصاری

    ہاتھ آ سکا ہے سلسلۂ جسم و جاں کہاں

    اپنی طلب میں گھوم چکا ہوں کہاں کہاں

    جس بزم میں گیا طلب سر خوشی لیے

    مجھ سے ترے خیال نے پوچھا یہاں کہاں

    میں آج بھی خلا میں ہوں کل بھی خلا میں تھا

    میرے لیے زمین کہاں آسماں کہاں

    تو ہے سو اپنے حسن کے باوصف غم نصیب

    میں ہوں تو میرے ہاتھ میں کون و مکاں کہاں

    ہوتی ہے ایک دشمنی و دوستی کی حد

    اس حد کے بعد زحمت لفظ و بیاں کہاں

    راہ جنوں میں تیشہ بدست آ گیا ہوں میں

    ہر سنگ ہے گراں مگر اتنا گراں کہاں

    اب چھوڑیئے تصور زلف و مژہ سحرؔ

    دشت غم جہاں میں کوئی سائباں کہاں

    مآخذ
    • کتاب : Range-e-Gazal (Pg. 234)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY