ہاتھ نکلے اپنے دونوں کام کے

داغؔ دہلوی

ہاتھ نکلے اپنے دونوں کام کے

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    ہاتھ نکلے اپنے دونوں کام کے

    دل کو تھاما ان کا دامن تھام کے

    گھونٹ پی کر بادۂ گلفام کے

    بوسے لے لیتا ہوں خالی جام کے

    رات دن پھرتا ہے کیوں اے چرخ پیر

    تیرے دن ہیں راحت و آرام کے

    اس نزاکت کا برا ہو بزم سے

    اٹھتے ہیں وہ دست دشمن تھام کے

    چشم مست یار کی اک دھوم ہے

    آج کل ہیں دور دور جام کے

    یا جگر میں یا رہے گا دل میں تیر

    یہ ہی دو گوشے تو ہیں آرام کے

    وہ کریں عذر وفا اچھی کہی

    مجھ پہ ردے رکھتے ہیں الزام کے

    جب قدم کعبے سے رکھا سوئے دیر

    تار الجھے جامۂ احرام کے

    خوش ہیں وہ دور فلک سے آج کل

    دن پھرے ہیں گردش ایام کے

    آ گیا ہے بھول کر خط اس طرف

    وہ تو عاشق ہیں مرے ہم نام کے

    ہاتھ سے صیاد کے گر کر چھری

    کٹ گئے حلقے ہمارے دام کے

    قاصدوں کے منتظر رہنے لگے

    پڑ گئے ان کو مزے پیغام کے

    کیا کسی درگاہ میں جانا ہے آج

    صبح سے سامان ہیں حمام کے

    پوچھتے ہیں حضرت زاہد سے رند

    دام کیا ہیں جامۂ احرام کے

    لب اتر آئے ہیں وہ تعریف پر

    ہم جو عادی ہو گئے دشنام کے

    دعویٰ عشق و وفا پر یہ کہا

    سب بجا لیکن مرے کس کام کے

    بن سنور کر کب بگڑتا ہے بناؤ

    صبح تک رہتے ہیں جلوے شام کے

    جور سے یا لطف سے پورا کیا

    آپ پیچھے پڑ گئے جس کام کے

    ہے گدائے مے کدہ بھی کیا حریص

    بھر لیے جھولی میں ٹکڑے جام کے

    نالہ و فریاد کی طاقت کہاں

    بات کرتا ہوں کلیجا تھام کے

    خوگر بیداد کو راحت ہے موت

    بھاگتا ہوں نام سے آرام کے

    داغؔ کے سب حرف لکھتے ہیں جدا

    ٹکڑے کر ڈالے ہمارے نام کے

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    ہاتھ نکلے اپنے دونوں کام کے فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY