حدیث سوز و ساز شمع و پروانہ نہیں کہتے

فگار اناوی

حدیث سوز و ساز شمع و پروانہ نہیں کہتے

فگار اناوی

MORE BYفگار اناوی

    حدیث سوز و ساز شمع و پروانہ نہیں کہتے

    ہم اپنا حال دل کہتے ہیں افسانہ نہیں کہتے

    وہی مے نوش راز بادۂ الفت سمجھتے ہیں

    جو مستی کو رہین جام و پیمانہ نہیں کہتے

    سعادت سوز دل کی بھی بڑی مشکل سے ملتی ہے

    سر محفل ہر اک شعلے کو پروانہ نہیں کہتے

    ہمارا ٹوٹا ساغر ہی ہمارے کام آئے گا

    کسی کے ظرف کو ہم اپنا پیمانہ نہیں کہتے

    یہ کیسا انقلاب آیا جہان بے نیازی میں

    کہ وہ بھی اپنے دیوانے کو دیوانہ نہیں کہتے

    فگارؔ اشعار میں اپنے ہیں رقصاں شوخیاں غم کی

    کلی کی داستاں پھولوں کا افسانہ نہیں کہتے

    مأخذ :
    • کتاب : Harf-o-nava (Pg. 38)
    • Author : umesh bahadur sirivasto figaar unnavi
    • مطبع : Figaar Unnavi (2001)
    • اشاعت : 2001

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY