ہے عبارت جو غم دل سے وہ وحشت بھی نہ تھی

فضیل جعفری

ہے عبارت جو غم دل سے وہ وحشت بھی نہ تھی

فضیل جعفری

MORE BYفضیل جعفری

    ہے عبارت جو غم دل سے وہ وحشت بھی نہ تھی

    سچ ہے شاید کہ ہمیں اس سے محبت بھی نہ تھی

    زندگی اور پر اسرار ہوئی جاتی ہے

    عشق کا ساتھ نہ ہوتا تو شکایت بھی نہ تھی

    تجھ سے چھٹ کر نہ کبھی پیار کسی سے کرتے

    دل کے بہلانے کی لیکن کوئی صورت بھی نہ تھی

    گھور اندھیروں میں خود اپنے کو صدا دے لیتے

    راہ چلتے ہوئے لوگوں میں یہ جرأت بھی نہ تھی

    ضد میں دنیا کی بہرحال ملا کرتے تھے

    ورنہ ہم دونوں میں ایسی کوئی الفت بھی نہ تھی

    مر مٹے لوگ سر رہ گزر عشق فضیلؔ

    اپنے حصے میں یہ چھوٹی سی سعادت بھی نہ تھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY