ہے جو بھی جزا سزا عطا ہو

گوہر ہوشیارپوری

ہے جو بھی جزا سزا عطا ہو

گوہر ہوشیارپوری

MORE BYگوہر ہوشیارپوری

    ہے جو بھی جزا سزا عطا ہو

    ہونا ہے جو آج برملا ہو

    اس دن بھی جو سر پہ دھوپ چمکی

    جس دن پہ بہت فریفتہ ہو

    اس رات بھی نیند اگر نہ آئی

    جس رات پہ اس قدر فدا ہو

    رنگوں میں وہی تو رنگ نکلا

    جو تیری نظر میں جچ گیا ہو

    پھولوں میں وہی تو پھول ٹھہرا

    جو تیرے سلام کو کھلا ہو

    اک شخص خدا بنا ہوا ہے

    کیا ہو جو یہی مرا خدا ہو

    سوگند مجھے غزل کی گوہرؔ

    میں نے جو زباں سے کچھ کہا ہو

    مأخذ :
    • کتاب : Funoon (Monthly) (Pg. 290)
    • Author : Ahmad Nadeem Qasmi
    • مطبع : 4 Maklood Road, Lahore (Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23)
    • اشاعت : Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY