ہے رشک وصل سے غم دل دار ہی بھلا

حسرتؔ عظیم آبادی

ہے رشک وصل سے غم دل دار ہی بھلا

حسرتؔ عظیم آبادی

MORE BYحسرتؔ عظیم آبادی

    ہے رشک وصل سے غم دل دار ہی بھلا

    راحت سے ایسی ہم کو وو دل آزار ہی بھلا

    دنیا میں یارو یار وفادار ہی نہیں

    اور جو نہ ہو تو رہنا ہے بے یار ہی بھلا

    معشوق کا نظارہ میسر ہو یا نہ ہو

    عاشق ہمیشہ طالب دیدار ہی بھلا

    زاری پہ میری رحم بھی کر آ خدا کو مان

    کافر رہے گا ہم سے تو بیزار ہی بھلا

    اطوار بد ہے غیر سے خلطہ مرے حضور

    اس کے عوض نہ کر تو ہمیں پیار ہی بھلا

    زخموں سے غم کے تیرا کلیجہ تو چھل گیا

    بلبل ہے ایسے گل سے تجھے خار ہی بھلا

    اک جرعہ درد مے پہ ہو اتنا نہ تلخ و تند

    ساقی میں ایسے مست سے ہشیار ہی بھلا

    حسرتؔ برا کیا میں اٹھایا دل اس سے کیوں

    دل دار گر نہ تھا تو دل آزار ہی بھلا

    مأخذ :
    • Deewan-e-Hasrat Azeemabadi

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY