ہے تلخ تر حیات اس شراب سے

نعیم رضا بھٹی

ہے تلخ تر حیات اس شراب سے

نعیم رضا بھٹی

MORE BYنعیم رضا بھٹی

    ہے تلخ تر حیات اس شراب سے

    تو عشق ہار دے گا اجتناب سے

    کہانیاں دہک رہی ہیں رات کی

    بدن الجھ رہے ہیں ماہتاب سے

    خدائے خواب خیمہ زن تھا آنکھ میں

    سو دل چٹخ رہا تھا اضطراب سے

    میں روشنی کے بیج بو کے سو گیا

    چراغ اگ رہے ہیں کشت خواب سے

    رفو گرو ہم ایسے خستہ تن یہاں

    ادھڑ ادھڑ کے آئیں گے سراب سے

    رضاؔ یہ خوشبوؤں کا ذائقہ نہیں

    جو رس رہا ہے جسم کے گلاب سے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY