ہے ترجمان الم اور ادیب ہے سردی

سبیلہ انعام صدیقی

ہے ترجمان الم اور ادیب ہے سردی

سبیلہ انعام صدیقی

MORE BYسبیلہ انعام صدیقی

    ہے ترجمان الم اور ادیب ہے سردی

    تبھی تو نوک قلم سے قریب ہے سردی

    دماغ عرش پہ ہے کانپتا زمین پہ ہے

    اے بندے درس لے عمدہ خطیب ہے سردی

    میں شال اوڑھ کے جو بام پر ٹہلتی ہوں

    پیام دوست کی شاید نقیب ہے سردی

    لرزتی کانپتی میں خود سے کہتی رہتی ہوں

    میں ملنے جاؤں تو کیسے رقیب ہے سردی

    ہوا بھی سرد ہے پت جھڑ بھی ہے درختوں پر

    فراق و ہجر میں لپٹی عجیب ہے سردی

    بسی ہوئی ہے فضا میں وہ فرحت انگیزی

    سلگتے زخموں کی بہتر طبیب ہے سردی

    سبیلہؔ موسم سرما بھی ایک نعمت ہے

    وہ خوش نصیب ہیں جن کو نصیب ہے سردی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY